Mehdi Hassan Ghazals - Ranjish hi sahi - Gulon mein rang bhare ghazals collection

Mehdi Hassan Ghazals - Ranjish hi sahi - Gulon mein rang bhare ghazals collection


Gulon mein rang bhare baad-e-nau-bahar chale

گلوں میں رنگ بھرے باد نوبہار چلے 
چلے بھی آؤ کہ گلشن کا کاروبار چلے

قفس اداس ہے یارو صبا سے کچھ تو کہو 
کہیں تو بہر خدا آج ذکر یار چلے 

کبھی تو صبح ترے کنج لب سے ہو آغاز 
کبھی تو شب سر کاکل سے مشکبار چلے 

بڑا ہے درد کا رشتہ یہ دل غریب سہی 
تمہارے نام پہ آئیں گے غم گسار چلے 

جو ہم پہ گزری سو گزری مگر شب ہجراں 
ہمارے اشک تری عاقبت سنوار چلے 

حضور یار ہوئی دفتر جنوں کی طلب 
گرہ میں لے کے گریباں کا تار تار چلے

مقام فیضؔ کوئی راہ میں جچا ہی نہیں 
جو کوئے یار سے نکلے تو سوئے دار چلے


Gulon main rang bhare bad-e-nu bhaar chaly
Chaly bhi aao ka gulshan ka karboor chaly

Qafas udas hai yaro saba sa kuch tu kahu
Kahni tu behre khuda aaj zikar e yaar chaly

Khbi tu subah tere kanj lab se ho aagaz 
Khbi tu shaab e sar kakul se mushkbar chaly

Bhda hai darad ka rishta yai dil gareeb sahi
Tumary naam peh aaen gey gham gasaar chly

Jo hum peh guzari soo guzari magar shaab e hijra
Hamary aashk teri aaqbat sanwar chly

Hazur yaar hoi daftaar junu ki talaab
Girra main leh keh gareban ka taar taar chly

Muqam e faiz koi reh main jacha hi niii
Jo koye yaar sa nehkly tu soye daar chaly


 Ranjish hi sahi

رنجش ہی سہی دل ہی دکھانے کے ليے آ
آ پھر سے مُجھے چھوڑ کے جانے کے ليے آ

کچھ تو ميرے پندارِ محبت کا بھرم رکھ
تُو بھی تو کبھی مجھ کو منانے کے ليے آ

پہلے سے مراسم نا سہی پھر بھی کبھی تو
رسم و رہِ دنيا ہی نبھانے کے ليے آ

کس کس کو بتائيں گے جدائی کا سبب ہم
تُو مجھ سے خفا ہے تو زمانے کے ليے آ 

ايک عمر سے ہوں لذتِ گِريہ سے بھی محروم
اے راحتِ جان مجھ کو رُلانے کے ليے آ 

اب تک دلِ خوش فہم کو تجھ سے ہيں اميديں
يہ آخری شمعيں بھی بُجھانے کے ليے آ


Ranjish hi sahi dil ko duhkane ka lea aa
aa phir sa muje chorr keh Jane ka lea aa

Kuch tu mere pandar e muhbaat ka bhram rahk
Tu bhi tu khbi muj ko manany ka leh aa

Pehle sa marasim na sahi phri bhi khbi tu
Rasam o raa e dunia hi nihbane ka lea aa

Kis kis ko btean gey judai ka sabab hum
Tu muj sa khafa hai tu zamne ka lea aa

Aik umar sa hon lazat e garya sa bhi mehroom
aa rahat e jaan muj ko rulane ka lea aa

Ab tahk dil kush fehm ko tuj sa hain umeden
Ya ahkri shamie bhi bujane ka lea aa



Ranjish hi sahi - Gulon mein rang bhare ghazals

Urdu language is one of the world's oldest language. It is full of emotions and has a rich literature, and therefore urdu ghazals and poetries are famous and have a name worldwide. Urdu language is full of poetries.

Gulon mein rang bhare is written by faiz ahmed faraz and Ranjish hi sahi by ahmed faraz and sung by by mehdi hassanThere are no songs or Mehdi hassan ghazals that are not the finest. The most difficult work that he has done in his singing is one of the great things he has done. Words cannot describe his work and efforts.



Post a Comment

0 Comments